ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﺳﮯ ﮨﻢ ﺳﮯ

ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮯ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﺳﮯ ﮨﻢ ﺳﮯ
ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺳﮯ ﻗﺎﺻﺪ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ___ ” ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﺎ

ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮯ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻞ ﺑﮭﯽ ﻧﮑﺎﻻ
ﻗﺎﺻﺪ ﻧﮯ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﯾﮧ ﮐﮩﺎ ___” ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﺎ
ﺗﻨﮓ ﺁﮐﮯ ﯾﮧ ﭘﻮﭼﮭﺎ ” __ ﺩﻡ ﺭﺧﺼﺖ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﻤﻠﮧ
ﻗﺎﺻﺪ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ” ﮐﮩﮧ ﺗﻮ ﭼﮑﺎ __ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﺎ
تیری باتیں ہی سنانے آئے
دوست بھی دل ہی دکھانے آئے
پھول کھلتے ہیں تو ہم سوچتے ہیں
تیرے آنے کے زمانے آئے
ایسی کچھ چپ سی لگی ہے جیسے
ہم تجھے حال سنانے آئے
کناروں نے کنارا کر لیا ہے
سو طوفاں کو سہارا کر لیا ہے
نہیں جس راہ پر منزل ہماری
وہی رستہ دوبارا کر لیا ہے
یہ آنکھیں اور نہ کچھ دیکھتی اب.
نہ جانے کیا نظارہ کر لیا ہے

کسی مہتاب کی قربت کی خاطر
ہر اک آنسو ستارا کر لیا ہے
تمہی سے تھی چھپانی دل کی حالت
تمہی کو خود اشارا کر لیا ہے

جو ہم نکلے ہیں تیری گفتگو سے
کوئی کیا اور پیارا کر لیا ہے
دیا تھا دل تمہیں سنبھالنے
.مگر تم نے اجارا کر لیا ہے
تھا کتنا شوق ہم کو زندگی کا
.جو تیرے بن گزارا کر لیا ہے
ہے آیا وقت یہ دنیا پہ کیسا
.کہ ہم جیسا گوارا کر لیا ہے
ابھی باقی ہے بدلہ زندگی سے
یوں سمجھو بس ادھارا کر لیا ہے
محبت وار کاری ، جانتے سب.
سو اس کو سب نے چارا کر لیا ہے
ﻗﺮﺏ ﮐﮯ ﻧﮧ ﻭﻓﺎ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
.ﺳﺎﺭﮮ ﺟﮭﮕﮍﮮ ﺍﻧﺎ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
ﺑﺎﺕ ﻧﯿﺖ ﮐﯽ ﮨﮯ ﺻﺮﻑ ﻭﺭﻧﮧ،

ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺖ ﺑﺮﺍ ﮐﮩﻨﺎ،
ﻟﻮﮒ ﭘﺘﻠﮯ ﺧﻄﺎ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ،

ﺍﻥ ﺳﮯ ﺭﺷﺘﮯ ﺑﻼ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ،
ﻭﮦ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﻓﯿﺾ،ﺟﯿﺴﮯ ﺑﻨﺪﮮ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ

Leave a Reply

Terms of Services

Contact Us

Contact Email: admin@haledil.com
Phone:+92-3060949548 Name HALEDIL.COM

Lahore Punjab.
Pakistan